دنیا

30روز کیلئے شام آنے والےٹرمپ کا شامی دلدل میں پھنستے چلے جانے کا اقرار

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مطابق شام میں امریکہ صرف 30 دن کی جنگ کے لیے آیا تھا لیکن دلدل میں پھنستا چلا گی

شیعت نیوز: امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مطابق شام میں امریکہ صرف 30 دن کی جنگ کے لیے آیا تھا لیکن دلدل میں پھنستا چلا گیا۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹرمپ نے لکھا جب انہوں نے اقتدار سنبھالا تو داعش کی بھرمار تھی اور ہم نے ان کی خلافت کو 100 فیصد شکست دی اور ہزاروں جنگجوؤں کو گرفتار کیا، جن میں اکثریت کا تعلق یورپ سے تھا۔

ٹرمپ نے لکھا کہ یورپی ممالک ان جنگجوؤں کو اپنانا نہیں چاہتے، وہ چاہتے ہیں کہ امریکہ ان کو اپنے پاس رکھے، ہم نے یورپی ممالک کی مدد کی اور اب وہ چاہتے ہیں کہ ہم جنگی قیدیوں کو اپنی جیلوں میں رکھ کر پیسے خرچ کریں لیکن ایسا کسی قیمت پر نہیں ہوگا۔ ٹرمپ نے لکھا کہ کرد ہمارے ساتھ مل کر لڑتے رہے، لیکن انہیں ایسا کرنے کے لیے بھاری رقم اور جنگی آلات فراہم کیے گئے، وہ دہائیوں سے ترکی کے ساتھ لڑ رہے تھے، میں نے یہ جنگ رکوائی۔

یہ بھی پڑھیں:صدر ٹرمپ کا مہاجرین پر گولیاں مارنے اور کرنٹ چھوڑنے کا مشورہ

امریکی صدر نے لکھا وقت آ گیا ہے کہ امریکہ ناختم ہونے والی فضول جنگوں سے باہر نکلے اور اپنے فوجیوں کو گھر لائے، اب سے ہم صرف اپنے مفاد اور صرف جیتنے کے لیے لڑیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ترکی، یورپ، ایران، عراق، روس اور کردوں کو اپنے آس پاس داعش سےخود نمٹنا ہوگا، داعش ہم سے 7 ہزارمیل کے فاصلے پر ہے اگر داعش دوبارہ ہمارے قریب آئی تو امریکہ اسے دوبارہ کچل ڈالے گا۔

دوسری جانب عالمی ذرائع ابلاغ میں خبریں آ رہی ہیں کہ امریکہ نے شمالی شام سے فوجیں نکالنا شروع کردی ہیں جہاں دو چیک پوسٹیں ختم کردی گئی ہیں۔ امریکی انخلا شروع ہوتے ہی ترکی نے شمالی شام میں فوجی آپریشن شروع کرنے کا اعلان کر دیا ہے، جس پر کرد ملیشا کی جانب سے تشویش کا اظہار کیا گیا ہے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close