اہم ترین خبریںایرانشیعت نیوز اسپیشلعراق

عراق میں امریکی فوجی اڈے زمیں بوس، لاشیں اسرائیل منتقل

خدا بھلاکرے عراق کی پارلیمنٹ کے دو اراکین کا کہ جنہوں نے امریکی نقصانات کی تصدیق کی

عراق میں امریکی فوجی اڈے زمیں بوس، لاشیں اسرائیل منتقل

حاج قاسم سلیمانی کی شہادت کے بعد ایران نے سخت انتقام سے پہلے ٹیزر کے طور پر ایک تھپڑ رسید کیا۔ چند میزائل ایران سے فائر ہوئے۔ پتہ چلا کہ عراق کے صوبہ الانبار میں عین الاسد اڈے پر امریکی تنصیبات زمیں بوس ہوگئیں۔ پتہ چلا کہ صوبہ اربیل میں ال حریر اڈے پر امریکی افواج کا جاسوسی مرکز نیست و نابود ہوگیا۔

امریکا کے منہ پر ایک تھپڑ

دنیا کو یہ غلط فہمی ہوئی کہ شاید ایران نے سخت انتقام لے لیا۔ مگر، بدھ کے روز رہبر معظم انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمیٰ سید علی حسینی خامنہ ای نے اسے امریکا کے منہ پر ایک تھپڑ قرار دیا۔

امریکی حکومت نے اپنے نقصانات کو چھپانے کے لئے عین الاسد فوجی اڈے کو پوری دنیا کے لئے نو گو ایریا بنادیا۔ حتیٰ کہ عراق کے سیکیورٹی حکام اور ذرایع ابلاغ کے نمائندگان کو بھی وہاں جانے نہیں دیا گیا۔ ذرایع ابلاغ کو تفصیلات بھی نہیں بتائیں گئیں۔

عراق میں امریکی فوجی اڈے زمیں بوس

ٍ خدا بھلاکرے عراق کی پارلیمنٹ کے دو اراکین کا کہ جنہوں نے امریکی نقصانات کی تصدیق کی۔ یہ دونوں اراکین دو مختلف جماعتوں سے تعلق رکھتے ہیں۔ تحالف الفتح کے نعیم العبودی کا کہنا ہے کہ امریکا کے زیر استعمال عمارات و تنصیبات زمین بوس ہوگئیں۔

پارلیمانی بلاک صادقون کے رکن اسمبلی حسین سالم کا کہنا ہے کہ میزائل گرتے وقت زلزلے جیسی کیفیت محسوس کی گئی۔

لاشیں تل ابیب منتقل

انکا کہنا ہے کہ امریکی افواج کا جانی نقصان بھی ہوا ہے۔امریکا نے لاشیں تل ابیب منتقل کردیں ہیں۔

عراق پر امریکی قبضہ

انہوں نے امریکا سے مطالبہ کیا کہ عراق کے سیکیورٹی حکام اور میڈیا کو عین الاسد اڈے آنے کی اجازت دیں۔ یہ ایک مطالبہ ہی پوری دنیا کے منافقین کے منہ پر ایک طمانچہ ہے۔ یعنی عراق کی پارلیمنٹ کا رکن اپنے ہی ملک عراق کی صورتحال بتارہا ہے۔

امریکا کی اجازت کے بغیر عراق کے حکام بھی عین الاسد نہیں جاسکتے۔

امریکی صدر ٹرمپ کےچہرے پر ہوائیاں

ٍ یہ ایران کا پہلا تھپڑ تھا کہ جس کی گونج پوری دنیا میں اب تک سنائی دے رہی ہے۔ جس نے نہیں دیکھا وہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پریس کانفرنس دیکھ لے۔ امریکی صدر اور دیگر اعلیٰ عہدیداروں کے منہ پر اس تھپڑ کے آثار نمایاں ہیں۔

صدر ٹرمپ نقصانات کو چھپارہے ہیں مگر لب و لہجہ بہت کچھ بتارہا ہے۔ جس نے بھی اس سے قبل ٹرمپ کو گفتگو کرتے دیکھا ہے، اس کے لئے فرق واضح ہے۔ ساری اکڑفوں نکل چکی ہے۔ چہرے پر ہوائیاں اڑ رہیں ہیں۔

میزائل روکنا اتنا مشکل کام تو نہیں تھا

امریکا کی سپر اور ہائی ٹیکنالوجی شاید پیمپر باندھے ہوئے ہے۔ ورنہ میزائل روکنا اتنا مشکل کام تو نہیں تھا!۔ ایک تھپڑنے عین الاسد اور ال حریر پر موجود امریکی اڈوں کا یہ حشر نشر کردیا۔ جب سخت انتقام کی پہلی قسط ہوگی تو کیا ہوگا!؟

امریکی افواج  جانیں بچاکر نکل لیں

عراق میں امریکی افواج بھی ٹرمپ حکومت سے بغاوت کرکے اپنی جانیں بچاکر نکل لیں۔

یہ خود امریکا کے اپنے مفاد میں ہے کہ عراق سمیت پورے خطے سے اڈے ختم کرکے نکل جائے۔ امریکا میں جنگ مخالف مظاہرے اسی لئے ہورہے ہیں۔ دنیا کے انصاف پسند عوام کا متفقہ مطالبہ ہے کہ امریکا دیگر ممالک میں اڈے ختم کرکے انخلاء کرے۔

عراق کی پارلیمنٹ بھی امریکی فوجی انخلاء کا مطالبہ کرچکی ہے۔ ایران بھی یہی چاہتا ہے۔ ایسا نہ ہو کہ کل کومشرقی ایشیا ء جاپان، جنوبی کوریا میں بھی یہی سب کچھ ہو۔

ایم ایس مہدی برائے شیعت نیوز اسپیشل

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close