اہم ترین خبریںپاکستان

واہگہ بارڈر خود کش حملہ کیس کے 3 تکفیری سہولت کاروں کو 5،5 بار سزائے موت کا حکم

انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج اعجاز احمد بٹر نے واہگہ بارڈر کیس کا فیصلہ سنایا

شیعت نیوز :واہگہ بارڈر خود کش حملہ کیس میں ملوث تکفیری دہشتگردوں کے سہولت کاروں کو 5،5 بار سزائے موت ، 24 بار عمر قید اور 10،10 لاکھ روپے جرمانہ ادا کرنے کی سزا سنا دی گئی۔

یہ بھی پڑھیں :سانحہ مدینتہ العلم، سندھ ہائیکورٹ کاسپاہ صحابہ کے مجرم تحسین نیاز کی سزائے موت برقرار رکھنے کا حکم

اطلاعات کے مطابق انسداد دہشتگردی لاہور کی خصوصی عدالت نے واہگہ بارڈر خود کش حملہ کیس میں ملوث کالعدم سپاہ صحابہ اور لشکر جھنگوی کے دہشتگردوں کے سہولت کاروں کو جرم ثابت ہونے پر 5،5 بار سزائے موت،24 بار عمر قید اور 10،10 لاکھ جرمانے کی سزا سنادی۔تفصیلات کے مطابق انسداد دہشتگردی لاہور کی خصوصی عدالت میں واہگہ بارڈ حملہ کیس کی سماعت ہوئی، اس موقع پر تکفیری سہولت کاروں کو انتہائی سخت سکیورٹی میں عدالت میں پیش کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں :ڈاکٹر نسیم جعفری اور شہریار رضوی کے قاتل تکفیری دہشتگردوں کو سزائے موت سنادی گئی

انسداد دہشتگردی عدالت کے جج اعجاز احمد بٹر نے واہگہ بارڈر حملہ کیس کا فیصلہ سنایا۔

یہ بھی پڑھیں :سانحہ شکارپور میں ملوث ۴ خطرناک دہشتگرد باعز ت بری

عدالت نے کالعدم سپاہ صحابہ اور کالعدم لشکر جھنگوی کے سہولت کاروں حسین اللہ، حبیب اللہ اور سید جان گجنی کو پانچ پانچ بار سزائے موت اور مجموعی طور پر تین تین سو سال قید کی سزا کاحکم دیا۔عدالت نے تینوں تکفیری سہولت کاروں ں کو تیس تیس لاکھ روپے مقتولین کے ورثا کو بطور معاوضہ ادا کرنے کا بھی حکم دیا۔یاد رہے کہ ملک دشمن کالعدم سپاہ صحابہ اور کالعدم لشکر جھنگوی کے سفاک دہشتگرد  حنیف اللہ عرف حمزہ کی جانب سے 2 نومبر 2014ء کو واہگہ بارڈر پر پرچم اتارنے کی تقریب کے دوران کئے گئے خودکش حملے میں 55 سے زائد افراد شہید جبکہ 100 سے زائد افراد کو زخمی ہوئے تھے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close