اہم ترین خبریںیمن

واشنگٹن یو ایس ایڈ ہتھیار اسکینڈل کو چھپانے کی کوشش کر رہا ہے۔ جنرل یحیی سریع

شیعت نیوز : امریکہ نے یمن میں سعودی اماراتی ملیشیا کے لئے امریکی ایجنسی برائے بین الاقوامی ترقی ( یو ایس ایڈ ) کے ذریعہ فراہم کردہ اسلحہ اسکینڈل پر پردہ ڈالنے کی کوشش کر رہا ہے۔

المسیرہ ٹیلی ویژن چینل کی رپورٹ کے مطابق امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے بدھ کے روز اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ امریکی اور نامعلوم فورسز نے 28 جون کو یمن کے ساحل سے آنے والے جہاز کو روک لیا جو ایرانی اسلحہ یمنیوں کو لے جارہا تھا۔

واشنگٹن کے ان دعوؤں پر یمن کی مسلح افواج کے ترجمان ، بریگیڈیئر جنرل یحیی سریع نے ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ یمنی فورسز کا یو ایس ایڈ کے علامت (لوگو) کے ساتھ البیضا میں سعودی فوجیوں کے خلاف حالیہ مہم کے دوران امریکی ہتھیاروں پر حملہ ہوتے دکھائی دینے کے ایک دن بعد امریکی وزیر خارجہ جھوٹے دعوے کرنے لگے ہیں ۔

پومپیو نے محکمہ خارجہ کی ایک نیوز کانفرنس کو بتایا ،’’ سلامتی کونسل کو خطے میں مزید تنازعات کی روک تھام کے لئے ایران پر اسلحہ کی پابندی میں توسیع کرنی ہوگی۔‘‘کوئی سنجیدہ فرد ممکنہ طور پر یقین نہیں کرسکتا ہے کہ ایران کسی بھی ہتھیار کا استعمال کرے گا ۔

یہ بھی پڑھیں : امریکہ، ایران کے ساتھ فوجی جنگ نہیں چاہتا۔ جنرل میک کنزی کا اعتراف

یمنی فوج کے ترجمان نے مزید کہا ہے کہ پومپیو 2015 کے ایران جوہری معاہدے کی شرائط کے تحت اکتوبر کے وسط میں میعاد ختم ہونے کی وجہ سے سلامتی کونسل کو پابندی میں توسیع کے لئے قائل کرنے کے لئے ایک امریکی مہم کی قیادت کر رہا ہے جس سے امریکہ نے 2018 میں دستبرداری اختیار کرلی تھی۔

انہوں نے گذشتہ ہفتے کونسل کے 15 ممبروں سے خطاب کے ساتھ براہ راست اپنی اپیل کی لیکن ویٹو سے چلنے والے روس اور چین نے توسیع کے خلاف اپنی مخالفت کا اشارہ کیا۔

دوسری طرف یمنی فوج کے ایک اعلی افسر نے کہا کہ جارح سعودی اتحاد کے جنگی طیاروں نے جنگ بندی کے دعووں کے بر خلاف گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران یمن کے صوبے الحدیدہ کے المنظر علاقے پر 12 مرتبہ پروازیں کیں جبکہ الحاج شہر پر سعودی اتحاد کے ڈرون طیاروں نے 9 مرتبہ پروازیں کیں۔ جبکہ الحدیدہ کے مختلف علاقوں پر 65 مرتبہ توپوں کے گولے داغے اور 103 مرتبہ فائرنگ کر کے جنگ بندی کی دھجیاں اڑائیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close