مقبوضہ فلسطین

یافا سے مسجد اقصیٰ تک دفاع قبلہ اوّل مارچ کا اعلان، فلسطینی طالبعلم گرفتار

شیعت نیوز : سنہ 1948ء کے مقبوضہ فلسطینی شہر یافا میں فلسطینی سماجی اور مذہبی شخصیات کی اپیل پرآئندہ جمعرات کو یوم عرفہ کے موقعے پر دفاع قبلہ اوّل مارچ کا اعلان کیا ہے۔ دفاع قبلہ اوّل مارچ میں فلسطینی شہریوں سے بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کی اپیل کی گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق جمعرات کو شام پانچ بجے یافا سے موٹرسائیکل ریلی مسجد اقصیٰ کی طرف رروانہ ہوگی۔ مارچ میں فلسطینی شہریوں سے شرکت کی اپیل کی گئی ہے۔

ریلی کے منتظمین کا کہنا ہے کہ اس سرگرمی کا مقصد قبلہ اوّل پر یہودی آباد کاروں کے اشتعال انگیز دھاووں کا جواب دینا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : صیہونی آبادکاروں نے البیرہ میں مسجد کو آگ لگا دی، فتح کے رہنما کا قتل

اس حوالے سے فلسطینی شہری یافا میں الغزازوہ پارک میں جمع ہوں گے جہاں سے ایک ریلی کی شکل میں مسجد اقصیٰ کی طرف روانہ ہوں گے۔ ریلی میں شریک روزہ دار مسجد اقصیٰ میں روزہ افطار کریں گے۔

قبل ازیں مسجد اقصیٰ کے امام اور خطیب الشیخ عکرمہ صبری نے فلسطینیوں سے اپیل کی تھی کہ وہ یوم عرفہ کے موقعے پر مسجد اقصیٰ میں اپنی حاضری یقینی بنائیں۔

دوسری جانب اسرائیلی فوجیوں نے غزہ کی پٹی کے شمال میں ایریز (بیت حانون) گزرگاہ سے فلسطینی طالبعلم کو مقبوضہ بیت المقدس جاتے ہوئے گرفتار کر لیا۔

فلسطینی اسیران کی کمیٹی کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ صیہونی فوجیوں نے 18 سالہ منصور الصفدی کو پڑھائی کے لیے بیت المقدس میں القدس یونیورسٹی  جاتے ہوئےغزہ کی پٹی میں ایریز گزرگاہ سے گرفتار کر لیا۔

کمیٹی نے کہا کہ الصفدی کے پاس اسرائیلی اسرائیلی شناختی کارڈ ہے اسکی ماں مقبوضہ بیت المقدس کی رہائشی ہے اپنے باپ کے ساتھ غزہ میں رہتا ہے جہاں سے اس نے اپنا ہائی سکول کا سرٹیفیکیٹ حاصل کیا۔

الصفدی کے والد ابراھیم الصفدی اپنی سزا پوری کرکے رہا ہونے والے سابق اسیر ہیں جو فلسطین کی آزادی کے لیے پاپولر فرنٹ کےنمائندہ ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close